امریکہ کا کالعدم ٹی ٹی پی کے سربراہ سمیت کئی افراد کو عالمی دہشتگرد قرار دینے کا اعلان

WASHINGTON, DC - SEPTEMBER 12: A sign stand outside the U.S. State Department September 12, 2012 in Washington, DC. U.S. Ambassador to Libya J. Christopher Stevens and three other Americans were killed in an attack on the U.S. Consulate in Benghazi, Libya. (Photo by Alex Wong/Getty Images)
15

مانیٹئرنگ ڈیسک واشنگٹن :  ( 24 گھنٹے )

US State Department

امریکہ نے پاکستان میں ہونے والے حملوں میں ملوث کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے سربراہ مفتی نور ولی محسود سمیت متعدد افراد کو عالمی دہشت گرد قرار دے دیا۔

نجی نیوز چینل کے مطابق امریکہ کے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیے کے مطابق لبنان کی حزب اللہ ۔ ایران کی پاسداران انقلاب، القاعدہ، فلسطین کی حماس، فلسطین اسلامک جہاد اور داعش سیمت دیگر تنظیموں سے وابستہ کئی افراد کو بھی عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ کالعدم ٹی ٹی پی کے سابق امیر ملا فضل اللہ کے 2018 میں ڈرون حملے میں مارے جانے کے بعد مفتی نور ولی محسود کو کالعدم تنظیم کا سربراہ بنایا گیا تھا۔

یاد رہے کہ مفتی نور ولی محسود کی قیادت میں کالعدم تحریک طالبان نے پاکستان میں کی جانے والی دہشت گردی کی متعدد کارروائیوں کی ذمہ داری بھی قبول کی ہے۔

امریکا نے گزشتہ ماہ بلوچستان لبریشن آرمی (بی ایل اے) کو بھی عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کیا تھا۔

اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے اعلامیے میں کہا گیا کہ دہشت گردی سے نمٹنے اور حکام کو جدید و مستحکم بنانے کے لیے امریکی صدر کی جانب سے ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کردیے گئے۔

یاد رہے کہ 11 ستمبر 2001 میں کیے گئے نیویارک میں دہشت گرد حملے کے بعد ایگزیکٹو آرڈر عالمی دہشت گردوں کی نامزدگی کی ایک تازہ شکل ہے جو امریکا کو دہشت گرد تنظیموں کے رہنماؤں پر پابندیاں عائد کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے کہا گیا کہ امریکا نے شام میں موجود القاعدہ کی ذیلی تنظیم ’حراس الدين‎‘ کو خصوصی طور پر نامزد عالمی دہشتگرد (ایس ڈی جی ٹی) میں شامل کردیا۔

جواب چھوڑیں