حکومت کی ٹیکس پالیسی کیخلاف ملک بھر میں تاجروں کی ہڑتال

Traders Strike
9

مانیٹئرنگ ڈیسک (24 گھنٹے )

Countrywide Strike

ٹیکس ٹیکس وصولی کے اقدامات کے  حوالے سے حکومتی پالیسی کے خلاف انجمن تاجران پاکستان کی کال پر ملک بھر کے تاجر ہڑتال کررہے ہیں۔

ملک بھر کی تاجر برادری کا کہنا ہے کہ مطالبات تسلیم ہونے تک احتجاج جاری رکھیں گے۔تاجر برادری کا مطالبہ ہے وزیرا عظم فکسڈ ٹیکس کا نظام لے کر آئیں۔ کراچی میں انجمن تاجران، تاجر ایکشن کمیٹی اور صدر طارق روڈ الائنس کی کال پر آج مارکیٹیں بند رہیں گی جب کہ شہر کی چھوٹی بڑی دکانیں بھی بند ہیں۔ کراچی صرافہ مارکیٹ کے تاجروں نے بھی ہڑتال کی حمایت کا اعلان کیا ہے

گوجرانوالہ، ساہیوال، ہڑپہ، چیچہ، وطنی، چشتیاں۔ نوشہرو فیروز، وہاڑی، میاں چنوں راولپنڈی، خانیوال، غلہ منڈی اور  سبزی منڈی میں بھی بازار مکمل طور پر بند ہیں۔

لاہور میں ہڑتال کے معاملے پر تاجربرادری دو حصوں میں تقسیم ہوگئی، اور انجمن تاجران اور پاکستان ٹریڈرز الائنس نے علیحدہ علیحدہ دھڑے بنا لیے۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں بھی ٹیکسز کےخ لاف تاجروں کی مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال ہے جس کے باعث آبپارہ، سپر، جناح سپر،م یلوڈی، کراچی کمپنی، جی ٹین اور جی الیون سیمت تمام کاروباری مراکز بند ہیں۔

ڈیرہ اسماعیل خان میں بھی تاجر برادری کی جانب سے ٹیکسس میں اضافے کے خلاف شٹر ڈاؤن ہڑتال جاری ہے۔

قصور، راجن پور اور شورکٹ میں بھی انجمن تاجران کی جانب سے ٹیکسز

کےخلاف مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال ہے۔ملتان کے علاقے گھنٹہ گھر،حسین آگاہی،گلگشت، ممتازآباد، گلشن مارکیٹ میں تمام دکانوں پر تالے ہیں۔

کوئٹہ سمیت بلوچستان کے مختلف شہروں میں بھی حکومت کی معاشی پالیسیوں کے خلاف مارکیٹیں اور دکانیں بند ہیں۔ تاجروں نے ٹیکسز میں اضافہ فوری طور پر واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

جواب چھوڑیں