وزیراعظم عمران خان نے پاکستان سٹیزن پورٹل کا افتتاح کردیا

Imran Khan Citizen Portal
4

مانیٹئرنگ ڈیسک(24 گھنٹے)

Citizen Portal

 وزیرِ اعظم عمران خان نے لوگوں کی شکایت آن لائن درج کروانے کے لیے پاکستان سٹیزن پورٹل کا افتتاح کردیا۔

پاکستان سٹیزن پورٹل کے افتتاح کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے کہا کہ اب تمام لوگ اس کی مدد سے اپنی شکایات درج کروا سکتے ہیں۔

وزیرِ اعظم نے کہا کہ اس نظام کی مدد سے وزرا کو معلوم ہوجائے گا کہ ان کے ماتحت اداروں میں کہاں سست روی آرہی ہے، کہاں مسائل پیدا ہورہے ہیں اور کونسا سرکاری افسر کرپشن کر رہا ہے یا رشوت مانگ رہا ہے۔

اس پورٹل کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیرِاعظم کا کہنا تھا کہ اسے پاکستان کے نوجوانوں نے بنایا ہے، جو دنیا کے دیگر ممالک میں بھی رائج ہے لیکن اب بھی یہ کچھ بڑے جمہوری ممالک میں موجود نہیں ہے۔

وزیرِاعظم نے کہا کہ پرانے پاکستان میں عوام سرکاری دفاترمیں دھکے کھاتے تھے، بااثر افراد اور پیسوں والے اپنے کام نکلوالیتے تھے، لیکن اب اس نظام کے تحت پاکستان کے کسی بھی حصے سے عام آدمی شکایت درج کرواسکے گا۔

اس پورٹل کے کام کرنے کے طریقہ کار کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ عوامی شکایات کی وجہ سے اب سرکاری افسران پر یہ دباؤ پڑے گا اور وہ کام کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ اس نظام سے بیرون ملک پاکستانیوں کو بھی آواز مل جائے گی، اور وہ سفارتخانوں کے ایسے اہلکاروں کی نشاندہی کر پائیں گے جو اپنا کام ٹھیک سے نہیں کرتے۔

انہوں نے بتایا کہ نظام کے تحت مجھےہر ہفتے پورے ملک سے رپورٹ ملے گی اور یہ نظام چاروں چیف سیکریٹریز سے منسلک ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس کی مدد سے عوام حکومت کا احتساب کر سکے گی، اور ملکی تاریخ میں پہلی بار حکومت قابلِ احتساب ہوجائے گی۔

انہوں نے کہا کہ اب پاکستان میں سرکاری افسران کی کارکردگی پورٹل کی بنیاد پر سب کے سامنے ہوگی اور سرکاری افسران کی سزا اور جزا آسان ہو جائے گی۔

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے وزیرِ اعظم نے کہا کہ وفاقی حکومت صوبائی معاملات میں براہِ راست مداخلت نہیں کرے گی بلکہ چیف سیکریٹری کے ذریعے ہدایت کی جائے گی۔

انہوں نے واضح کیا کہ وہ پورے پاکستان کے وزیرِ اعظم ہیں اور سندھ کے معاملات کو بھی دیکھیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت سندھ حکومت کے ماتحت اداروں کے خلاف موصول ہونے والی شکایات پر براہِ راست مداخلت نہیں کرے گی بلکہ اس کے بارے میں پہلے صوبائی حکومت کو آگاہ کیا جائے گا، اور وہاں سے اگر کوئی جواب موصول نہیں ہوگا تو شکایت کنندہ کو بتادیا جائے گا کہ یہاں سے شکایت پر جواب موصول نہیں ہورہا۔

وزیرِ اعظم کا کہنا تھا کہ ملک میں رکاوٹیں دور ہوں گی تو بیرونی سرمایہ کاری آئےگی اور قرضوں کے بوجھ سے نکلنے کا راستہ ملک میں سرمایہ کاری لانا ہے۔

سعودی پیکیج کے حوالے سے باتے کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ’سوالات اٹھائے جارہے ہیں کہ سعودی عرب نے جو قرض دیا ہے اس کی شرائط کیا ہیں، تاہم یہاں میں یہ واضح کرنا چاہتا ہوں کہ سعودی پیکیج میں کوئی شرائط شامل نہیں ہیں‘۔

وزیرِ اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ بہتر گورننس نہ ہونے کی وجہ سے پاکستان پیچھےرہ گیا، بیرونی سرمایہ کار پاکستان میں گڈگورننس کے منتظر ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ترقی یافتہ ملکوں میں عوام کی آواز پر پالیسیاں بنائی جاتی ہیں، نیا پاکستان تب بنے گا جب شہریوں کو اپنائیت کا احساس دیا جائے گا۔

جواب چھوڑیں