قصور کے بعد اوکاڑہ میں بھی بچوں کیساتھ زیادتی کا انکشاف

Child Abuse
56

اوکاڑہ (24 گھنٹے)

میں طالبعلموں کے ساتھ جنسی زیادتی کی ویڈیوز بنا کر بلیک میل کرنے والے گروہ کا انکشاف ہوا ہے۔

اے ایس پی دیپالپور کے مطابق طالبعلموں سے زیادتی کی وڈیوزبنانے والے گروہ کے ایک ملزم کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

پولیس افسر کے مطابق ملزم یوسف سے 2009 میں بنائی گئی ویڈیوز بھی برآمد کرلی گئیں ہیں۔

اے ایس پی کے مطابق ملزم کے خلاف درج مقدمے میں دہشت گردی ایکٹ، جنسی زیادتی کی دفعات شامل کر کے تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

قصور زیادتی اسکینڈل

قصور ویڈیو اسکینڈل 2015 میں سامنے آیا تھا جب قصور کے گاؤں حسین خان والا میں سینکڑوں بچوں سے بدفعلی کا شور اٹھا اور ویڈیوز بھی سامنے آئیں، اسی گاؤں کے ایک خاندان پر 284 لڑکوں سے بد فعلی کا الزام لگا، جس کے بعد وزیراعظم کے حکم پر ڈی آئی جی ابوبکر خدابخش کی سربراہی میں 5 رکنی جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم نے واقعے کی تحقیقات کیں۔

اس معاملے کی تحقیقات کے لیے قائم کی گئی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے 20 بچوں کے متاثر ہونے کی تصدیق کی ۔ تاہم، انسانی حقوق کے ادارے ایچ آر سی پی نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ اس اسکینڈل میں متاثرہ بچوں کی تعداد بہت زیادہ ہے۔

اس سے قبل 2016 میں بھی دو ملزمان کو عمرقید کی سزا سنائی جاچکی ہے۔

جواب چھوڑیں